Latest

latest

Ajeeb Kahani

Ajeeb Kahani

Aulad

Aulad

Wazifa

Wazifa

Rizq Rozi

Rizq Rozi

Istikhara

Istikhara

Imaan

Imaan

News By Picture

Ajeeb Kahani

Ilaaj

Wazifa Khawab Main Nabi Pak SAW Ki Ziarat Ka: Khawab Ki Iqsaam | Istikhara ICU

No comments



وظیفہ خواب میں نبیؐ کی زیارت کا خواب کی اقسام

قرآن اور حدیث سے ہمیں پتا چلتا ہے کہ کس طرح نیک اور سچے خواب کے ذریعے اللہ ہمیں مستقبل کے بارے میں اشارے فرماتا ہے۔ یاد رہے یہ کوئی علم نجوم نہیں کوئی خاص پڑھائی نہیں ہے۔ اللہ جس کو چاہتا ہے خبردار کر دیتا ہے، بعض لوگ جعلی پیر فقیر پیسے لے کر لوگوں سے طرح طرح کی کیانیاں سنا کر استخارہ کرنے کے بہانے سے پیسے بٹورتے ہیں اور دوسرے دن جھوٹ کے خواب سنا دیتے ہیں۔

حضرت انسؓ بن مالک سے مروی ہے کہ آپؐ نے فرمایا نیک آدمی اچھا خواب دیکھے تو یہ نبوت کے چھیالیس اجزاء میں سے ایک جز ہے۔

بخاری حدیث

نبوت آپؐ پر ختم ہو گئی ہے آپؐ آخری نبی ہیں اس حدیث کا اشارہ کی مثال- جس طرح اللہ خواب کے ذریعے اپنے نبیوں کو اگاہ کرتا ہے ایسے ہی اپنے نیک بندوں کو بھی اشارے دیتا ہے۔ اسی طرح الہام کے ذریعے بھی بات دل میں ڈال دی جاتی ہے۔ یاد رہے انبیاء کے خواب سو فیصد سچے ہوتے ہیں اور آم لوگوں کے خواب سچ ہوتے بھی ہیں اور کبھی نہیں بھی، یہ فرق ہی ان چھیالیس جز کا نیک لوگوں کا اور نبیوں کا۔


آپؐ نے فرمایا کہ سچا خواب اللہ کی طرف سے ہوتا ہے اور غیر سچا نا پسندیدہ ڈرائونا خواب شیطان کی طرف سے ہوتا ہے۔

آپؐ نے فرمایا تم میں سے جب کوئی شخص اچھا خواب دیکھے تو اللہ کو شکر کرے اور اپنے قریبی احباب سے بیان کرے۔ اور اگر کوئی برا خواب دیکھے تو اللہ سے شیطان کے شر سے پناہ مانگے اور کسی سے خواب بیان نہ کرے۔ دوسری حدیث میں کہ اپنی بائیں جانب تین بار تھوکے اور بسم اللہ پڑھے شیطان اس کو کوئی نقصان نہیں پہنچائے گا۔

خواب میں آپؐ کی زیارت کرنا۔

اس بات پر کسی کو کوئی شک نہیں ہونا چاہیے کہ اللہ جس کو چاہے اپنے نبیؐ کا دیدار کروا دے، اور یہ دیدار کرنے والے کے لیے بڑے نصیب کی بات ہے۔ مگر شیطان اس بات پر بھی لوگوں کو گمراہ کر رہا ہے، آپ لوگوں نے بہت سنا ہو گا کہ بہت سے لوگ آپؐ کے دیدار کا دعوٰ کر چکیں ہیں جھوٹا اور پتا نہیں کیا کیا باتیں بنا رکھیں ہیں۔
اوی بعض لوگ جعلی پیر جعلی عالم جعلی مولوی طرح طرح کے وظیفہ بتاتے ہیں کہ یہ پڑھو تو خواب میں آپؐ کا دیدار ہو گا، سب جھوٹ پر مبنی ہے ایسا کوئی وظیفہ نہیں جس کے خاص پڑھنے سے آپؐ کا دیدار ہو جائے مگر یہ کہ اللہ چاہے۔۔۔

اور سب سے بڑی بات یہ ہے کہ وظیفہ بتانے والا خد اللہ کا بندہ نہیں ہوتا نہیں تو ایسا عمل کرنے کو بلکل بھی نہ کہے سچ تو یہ کہ ان کو شیطان نے گمراہ کر دیا ہے اور بعض اوقات وظیفہ بھی شرکیہ ہوتا ہے۔ کبھی تعویز بھی دیے جاتے ہیں، تو آپ خد سوچ لیں ایسا کرنے سے آپؐ دیدار ہو سکتا ہے میوزک ٹیپ کی نات اور سچے کلمات کو پڑھنے سے کبھی بھی زیارت نصیب نہیں ہو گی۔

خواب میں  آپؐ کی زیارت  کے حوالے سے رائے۔

آپؐ نے فرمایا جس نے مجھے خواب میں دیکھا اس نے واقعی مجھے دیکھا کیونکہ شیطان میرا روب نہیں لے سکتا۔
آپؐ کی زیارت دو طرح کے لوگوں کے لیے ممکن ہے۔
ایک تو صحابہؓ میں سے کسی کو کیونکہ انہوں نے حالت بیداری میں آپؐ کو دیکھا ہے اور وہ خوب جاننے والے ہیں آپؐ کی صورت کو کہ یہ نبیؐ ہی ہیں شیطان نہیں۔ شیطان انکو دوکا نہیں دے سکتا۔

دوسرا وہ شخص جس کو قرآن حدیث کا علم ہو اور آپؐ زندگی کے بارے میں خوب جانتا ہو کہ آپؐ کے بارے میں جو حدیث ہیں اس سے وہ عالم نیک شخص کو پتا چل جائے گا کہ یہ شیطانی خواب ہے یا حقیقی آپؐ کی زیارت ہوئی ہے، کیونکہ خواب دیکھنے والا سیرت نبیؐ پڑھ چکا ہے۔

اب بعص لوگ کہتے ہیں مجھے نبیؐ زیارت ہوئی آپؐ کی داڑھی نہیں تھی -معاذ اللہ -
کوئی کہتا ہے آپؐ مجھ سے ملتے ہیں اور میں واپسی مکہ اور مدینہ کا آپؐ کو کرایہ - ٹکٹ - دیتا ہوں لعنت جھوٹے پر اللہ کی اور کچھ پیر فقیر عامل کہتے ہیں مجھے آپؐ نے نمازیں معاف کر دیں ہیں نماز دل میں ہوتی ہے وغیرہ وغیرہ۔۔۔

سورۃ مائدہ آیات ۳ میں ہے۔
آج کے دن میں نے تمہارے لیے دین کو مکمل کر دیا ہے۔ 
مسلمان کا ایمان ہونا چاہیے کہ آپؐ نے ہمیں سب کچھ بتلا دیا ہے کوئی بھی علم چھپا کے نہیں رکھا اگر اب بھی کوئی شخص یہ کہے کہ مجھے آپؐ نے خواب میں یہ بات بتائی وہ بات بتائی تو پھر اس کا اللہ ہی حافظ ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ کچھ لوگ دنیا میں نام پیسہ بنانے کے لیے اللہ اور رسولؐ پر جھوٹ باندتے ہیں ان کو کوئی خواب نہیں آتا اور کچھ لوگوں کو شیطان گمراہ کرتا ہے خواب میں آ کر کبھی ایک شخص آتا ہے اور نبیؐ ہونے کا داعوٰ کرتا ہے اور کبھی دو شخص آتے ہیں اور ایک کہتا ہے یہ نبیؐ ہیں حقیقت میں یہ شیطان کی گمراہی دوکا ہے۔
اللہ ہم سب کو ایسے فتنے اور شیطانی وسوسے اور گمراہی سے بچا کے رکھے آمین



Islam nahusat Badshugni Aur Faal Nikalna - Dor e Jahalat Istikhara

No comments

 


 

اسلام میں بدشگونی نحوست اور فال نامے کی حقیقت

عرب لوگ دورے جہالت میں جب کسی سفر پر جانے لگتے تو پرندوں کو دیکھتے اگر تو پرندہ دائیں جانب اڑتا تو وہ سفر پر اچھا سمجھتے اور اگر پرندہ بائیں جانب اڑتا وہ سفر کو بدشگونی یعنی نحوست کا دن سفر سمجھتے اور سفر نہ کرتے۔

اہل عرب اپنی قسمت آزماتے تھے مگر جب اسلام آیا تو اس جہالت کو باطل قرار دیا۔

 جہالت عرب بدشگونی کی بہت سی قسموں سے اپنی قسمت آزماتے۔

اگر راستے میں جاتے کسی بلی کو دیکھ لیا،سفر میں جاتے کوئی ایسا لفظ سن لیا جس نحوست کہلاتا ہو،سفر میں جاتے کوئی کالے رنگ کا جانور دیکھ لیا،سفر میں جاتے کسی ایسے قبیلے کے لوگوں کو دیکھ لیا، سفر میں کوِئی ایسی جگہ دیکھ لی، وغیرہ تو سفر بلکل نہ کرتے اور چند ایسے بدشگونی اور نحوست کے مہینے بھی مقرر کر رکھے تھے جن میں سفر نہیں کرنا۔


نحوست اور فال نامہ

ان سب کاموں کو جو بیان کیا ہے اپر دیکھ کر چند ایسے ماہر لوگ جو جانوروں کو دیکھ سکتے تھے مطلب - ماں کو پتا ہوتا ہے اس کا بچہ رو رہا ہے اس کو کیسے چپ کروانا ہے - ایسے ہی چند لوگ جن کا جانوروں سے لگائو تھا اور کچھ علم بھی تھا شیطانی انہوں نے فال نکالنے کا کام شروع کیا نام بھی اور دام بھی۔۔۔ یہ کام ایسے چلا کے آپ اندازہ لگا لیں اللہ نے آیات نازل فرما دی۔ جہالت میں سب سے پہلے لوگ تیر لگانے سے اپنی قسم کا حال معلوم کرتے تھے، یعنی کچھ تکڑوں پر لکھ کر - میں یہ کام اللہ کی مرضی سے کرو؟ میں یہ کام اللہ کی مرضی سے نہ کرو؟ پھر تیر سے نشانہ لگاتے اور قسمت آزماتے۔



سورہ المائدہ  

۳  تم پر حرام کیا گیا مردار اور خون اور خنزیر کا گوشت اور جس پر اللہ کے سوا دوسرے کا نام پکارا گیا ہو اور جو گلا گھٹنے سے مرا ہو اور جو کسی ضرب سے مر گیا ہو اور جو اونچی جگہ سے گر کر مرا ہو اور جو کسی کے سینگ مارنے سے مرا ہو اور جسے درندوں نے پھاڑ کھایا ہو لیکن اسے تم ذبح کر ڈالو تو حرام نہیں اور جو آستانوں پر ذبح کیا گیا ہو اور یہ بھی کہ قرعہ کے تیروں کے ذریعے فال گیری کرو یہ سب بدترین گناه ہیں، آج کفار تمہارے دین سے ناامید ہوگئے، خبردار! تم ان سے نہ ڈرنا اور مجھ سے ڈرتے رہنا، آج میں نے تمہارے لئے دین کو کامل کردیا اور تم پر اپنا انعام بھرپور کردیا اور تمہارے لئے اسلام کے دین ہونے پر رضامند ہوگیا۔ پس جو شخص شدت کی بھوک میں بے قرار ہو جائے بشرطیکہ کسی گناه کی طرف اس کا میلان نہ ہو تو یقیناً اللہ تعالیٰ معاف کرنے واﻻ اور بہت بڑا مہربان ہے


آج کل بدشگونی فال اور نحوست جو دورے جہالت سے جا ملا۔

  • گھر پر کوے کی آواز آنے سے مہمان آنے کی خبر
  • اگر کسی کو جھاڑو سے مارو تو وہ بچہ سوکھ جائے گا
  • شام یا رات کو مرغا آذان دے تو اس کو ذبح کر لو 
  • دائیں اور بائیں ہاتھ پر خارش ہونے سے دولت آنے جانے کی علامت
  • پائوں میں خارش  سفر کے آنے جانے کی علامت
  • آنکھ کا پھڑکنا۔۔۔
  • شیشہ ٹوٹ جانا
  • دودھ گرجانا۔
  • کسی نئی  دلہن کے گھر آنے سے نحوست اور بدشگونی۔


سورہ عراف 

۱۳۰  اور ہم نے فرعون والوں کو مبتلا کیا قحط سالی میں اور پھلوں کی کم پیداواری میں، تاکہ وه نصیحت قبول کریں

۱۳۱  سو جب ان پر خوشحالی آجاتی تو کہتے کہ یہ تو ہمارے لیے ہونا ہی چاہئے اور اگر ان کو کوئی بدحالی پیش آتی تو موسیٰ (علیہ السلام) اور ان کے ساتھیوں کی نحوست بتلاتے۔ یاد رکھو کہ ان کی نحوست اللہ تعالیٰ کے پاس ہے، لیکن ان کے اکثر لوگ نہیں جانتے


سورہ بنی اسرائیل 

۱۳  ہم نے ہر انسان کی برائی بھلائی کو اس کے گلے لگا دیا ہے اور بروز قیامت ہم اس کے سامنے اس کا نامہٴ اعمال نکالیں گے جسے وه اپنے اوپر کھلا ہوا پالے گا


سورہ یسین 

۱۸  انہوں نے کہا کہ ہم تو تم کو منحوس سمجھتے ہیں۔ اگر تم باز نہ آئے تو ہم پتھروں سے تمہارا کام تمام کردیں گے اور تم کو ہماری طرف سے سخت تکلیف پہنچے گی

۱۹  ان رسولوں نے کہا کہ تمہاری نحوست تمہارے ساتھ ہی لگی ہوئی ہے، کیا اس کو نحوست سمجھتے ہو کہ تم کو نصیحت کی جائے بلکہ تم حد سے نکل جانے والے لوگ ہو


سورہ النمل 

۴۷  وه کہنے لگے ہم تو تیری اور تیرے ساتھیوں کی بدشگونی لے رہے ہیں؟ آپ نے فرمایا تمہاری بدشگونی اللہ کے ہاں ہے، بلکہ تم فتنے میں پڑے ہوئے لوگ ہو


سورہ النساء 

۷۸  تم جہاں کہیں بھی ہو موت تمہیں آپکڑے گی، گو تم مضبوط قلعوں میں ہو، اور اگر انہیں کوئی بھلائی ملتی ہے تو کہتے ہیں کہ یہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہے اور اگر کوئی برائی پہنچتی ہے تو کہہ اٹھتے ہیں کہ یہ تیری طرف سے ہے۔ انہیں کہہ دو کہ یہ سب کچھ اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہے۔ انہیں کیا ہوگیا ہے کہ کوئی بات سمجھنے کے بھی قریب نہیں

۷۹  تجھے جو بھلائی ملتی ہے وه اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہے اور جو برائی پہنچتی ہے وه تیرے اپنے نفس کی طرف سے ہے، ہم نے تجھے تمام لوگوں کو پیغام پہنچانے واﻻ بنا کر بھیجا ہے اور اللہ تعالیٰ گواه کافی ہے


آپؐ نے فرمایا: بدشگونی شرک ہے بدشگونی شرک ہے بدشگونی شرک ہے ہم میں سے ہر ایک کے دل میں برا شگون پیدا ہو سکتا ہے، مگر اللہ پر یقین رکھے تو اللہ اس کو دور کر دیتا ہے۔


آپؐ نے فرمایا متعدی بیماری، بدشگونی، الو اور سفر، اور مہینوں کا شمار نحوست کا تصور غلط ہے۔

 حاکم،نسائی،احمد


Dil Ki Barbadi Ke Asbaab: Quran o Hadith Urdu - Gunah Gaar Insan?

No comments

 


Dil Ki Burai Ke Asbaab Quran O Hadees Main.

قرآن اور حدیث میں سے آپ کے پاس جتنا بھی علم ہے اس کو اپنے دوستوں رشتے داروں اور جن کو آپ نہیں جانتے ان کو ساتھ ضرور شئیر کریں تا کہ آپ کسی کے لئے اچھا کام کر سکیں ہو سکتا ہے آپ کی وجہ سے وہ کامیاب ہو جائے اور اس کی وجہ سے آپ کامیاب ہو جائو۔ کسی کو ٹھیک راستہ بتانا یاں اچھا مشورہ دینا بھی نیکی ہے۔

گناہ اور نافرمانی۔

۱۴  یوں نہیں بلکہ ان کے دلوں پر ان کےاعمال کی وجہ سے زنگ (چڑھ گیا) ہے


قرآن مجید کا چھوڑنا۔

۱۲۴  اور (ہاں) جو میری یاد سے روگردانی کرے گا اس کی زندگی تنگی میں رہے گی، اور ہم اسے بروز قیامت اندھا کر کے اٹھائیں گے

۱۲۵  وه کہے گا کہ الٰہی! مجھے تو نے اندھا بنا کر کیوں اٹھایا؟ حاﻻنکہ میں تو دیکھتا بھالتا تھا


عہد شکنی کرنا۔

۱۳  پھر ان کی عہد شکنی کی وجہ سے ہم نے ان پر اپنی لعنت نازل فرمادی اور ان کے دل سخت کردیئے کہ وه کلام کو اس کی جگہ سے بدل ڈالتے ہیں اور جو کچھ نصیحت انہیں کی گئی تھی اس کا بہت بڑا حصہ بھلا بیٹھے، ان کی ایک نہ ایک خیانت پر تجھے اطلاع ملتی ہی رہے گی ہاں تھوڑے سے ایسے نہیں بھی ہیں پس توانہیں معاف کرتا جا اور درگزر کرتا ره، بےشک اللہ تعالیٰ احسان کرنے والوں سے محبت کرتا ہے


بدعت۔

۵  اور (یاد کرو) جبکہ موسیٰ نے اپنی قوم سے کہا اے میری قوم کے لوگو! تم مجھے کیوں ستا رہے ہو حاﻻنکہ تمہیں (بخوبی) معلوم ہے کہ میں تمہاری جانب اللہ کا رسول ہوں پس جب وه لوگ ٹیڑھے ہی رہے تو اللہ نے ان کے دلوں کو (اور) ٹیڑھا کر دیا، اور اللہ تعالیٰ نافرمان قوم کو ہدایت نہیں دیتا



دنیاں کی لالچ

عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ   رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: قریب ہے کہ مسلمان مدینہ میں محصور کر دیئے جائیں یہاں تک کہ ان کی عملداری صرف مقام سلاح تک رہ جائے ۔ 

Sunan Abu Dawood Hadith No. 4299


برے دوست بری مجالس مثال

ہم سے موسیٰ بن اسماعیل نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ ہم سے عبدالواحد نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ ہم سے ابوبردہ بن عبداللہ نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ میں نے ابوبردہ بن ابی موسیٰ سے سنا اور ان سے ان کے والد موسیٰ رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ   رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا نیک ساتھی اور برے ساتھی کی مثال کستوری بیچنے والے عطار اور لوہار کی سی ہے۔ مشک بیچنے والے کے پاس سے تم دو اچھائیوں میں سے ایک نہ ایک ضرور پا لو گے۔ یا تو مشک ہی خرید لو گے ورنہ کم از کم اس کی خوشبو تو ضرور ہی پا سکو گے۔ لیکن لوہار کی بھٹی یا تمہارے بدن اور کپڑے کو جھلسا دے گی ورنہ بدبو تو اس سے تم ضرور پا لو گے۔ 

Sahih Bukhari Hadith No. 2101


دنیاوی گفتگو کی کثرت

عبداللہ بن عمر رضی الله عنہما کہتے ہیں کہ   رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”ذکر الٰہی کے سوا کثرت کلام سے پرہیز کرو اس لیے کہ ذکر الٰہی کے سوا کثرت کلام دل کو سخت بنا دیتا ہے اور لوگوں میں اللہ سے سب سے زیادہ دور سخت دل والا ہو گا“۔ 

Jami At Tirmidhi Hadith No. 2411

Crypto Exchange

سورہ وَالضُّحَى | سبحان اللہ، اللہ تعالیٰ کیا فرما رہا ہے - Subhan Allah, what is Allah Almighty saying?

No comments

 


اللہ تعالیٰ قسمِ کھا کھا کر انسانوں کو سمجھا رہا دن رات کی قسم سبحان اللہ اور اللہ تعالیٰ فرما رہا ہے، میں نے تمہیں تنہا نہیں چھوڑا بلکہ ہم لوگ ہی ظالم ،اور ناشکرے ہیں، اپنے رب کا شکر نہیں کرتے معافی نہیں مانگتے، کبھی قرآن کو ترجمہ کے ساتھ پڑھ کے تو دیکھو اللہ تعالیٰ فرما کیا رہا ہے اور کتنے پیارے انداز سے نشانیاں دے کر سمجھا رہا ہے۔ 


اس سورت کو پڑھ کو جو سکون اور مزہ آتا ہے وہ دنیا اور دنیاوی کاموں سے بڑھ کر ہے یوں لگتا ہے بلکہ حقیقت ہے آپ کو سب کچھ مل جائے گا کیونکہ اللہ خد فرما رہا ہے میں نے تمہیں نہیں چھوڑا نہ تجھے بھولا ہوں بلکہ اللہ تو چاہتا ہے میرے بندے توبہ کر میرے ساتھ رابتا رکھ پھر دیکھ میں تیرے لیئے کیا کرتا ہوں۔

جادوگر جنات پیر اور غائب کا علم Allah Ke Siwa Gaib Kon Janta Hai?

No comments

 مہربانی فرما  کر اس کو شیئر ضرور کریں تاکہ سب کے علم میں اضافہ ہو اور حقیقت سے آغاہ رہیں

جنات کی بعض آسمانی خبروں کو اچک لے بھاگنے کی تفسیر یعنی جادوگروں اور جنات کے غائب کے علم کی کیفیت۔

Pehla Hissa Read Karne Ke Liye Yaha Click Kare



 حدیث میں ابوہریرؓہ نے آپؐ سے آسمانی خبروں کو اچک لے بھاگنے کی کیفیت کی وضاحت اس طرح روایت کی ہے۔

آپؐ نے فرمایا: جب اللہ آسمانوں میں کسی امر کے بارے میں فیصلہ فرماتا ہے تو فرشتے اللہ کے حکم کی فرمابرداری میں اپنے بازو پھڑ پھڑاتے ہیں اور اس سے اس طرح کی آواز پیدا ہوتی ہے گویا زنجیر چٹانوں پر کھینچی جا رہی ہو۔


جب ان کے دلوں پر سے خوف کی کیفیت دور ہوتی ہے تو وہ کہتے ہیں تمہارے رب نے کیا حکم فرمایا ہے؟ وہ کہتے ہیں کہ حق فرمایا ہے اور وہی سب سے اعلٰی اور برتر ہے۔ پس چوری سے سننے والے جن اس حکمِ الٰہی کو سن لیتے ہیں۔ وہ چوری چھپے سننے والے ایک دوسرے کے اوپر کھڑے ہو کر اوپر پہنچتے ہیں۔ کبھی شہاب ثاقب اس سننے والے کو آ لگتا ہے، اور اس کو جھلا کر بھسم کر دیتا ہے، اس سے قبل کے وہ سنی ہوئی بات نچلے ساتھی جن کو بتا دے اور کحی ایسا ہوتا ہے کہ شہاب ثاقب اس کو نہیں لگتاحتٰی کہ وہ اپنے نچلے والے کو اور وہ اپنے سے نپچے والے کو خبر پہنچا دیتا ہے، حتٰی کی وہ خبر سب سے نپچے والے جن تک پہنچ جاتی ہے جو زمین پر ہوتا ہے۔ پس وہ خبر جنات شرک کرنے والے جادوگروں ساحر اور کاہن کے منہ تک پہنچ جاتی ہے، جو اس میں بہت سے جھوٹ ملا کے لوگوں تک پہنچاتا ہے۔ جب اس میں سے ایک بھی بات سچ ہو جاتی ہے تو تو لوگ یہی کہتے ہیں کیا فلاں نے  یہ نہیں کہا تھا کہ ایسا ایسا ہو گا میں نے اس پیر کو یا فقیر کو آسمان کی خبر دینے پر سچا پایا پے۔ 

غائب جاننے کی دوسری قسم: جن جس شخص کو اپنا دوست بنا لیتا ہے اس کو دوسرے لوگوں کی خبریں دیتا اور یہ خبریں غیب سے نہیں ہوتی بلکہ یہ خبریں دو طرح سے لی جاتی ہیں


پہلا طریقہ: جادو گر اپنے جن دوست کو کہتا ہے فلاں شخص کی نگرانی رکھا کیا کیا کرتا ہے پھر وہ شخص جو بھی کرتا ہے جن اس کو بتاتا ہے کے اج اس نے یہ کیا ہے کیونکہ جنات انسان کو نظر نہیں آتے اس کی مثال اپ ہوں لگا لیں کہ دیواروں کے بھی کان ہوتے ہیں یا ایک پردے کے پیچھے چھپ کو کوئی ہماری بات سن لے اور دوسروں کو بتا دے۔

دوسرا طریقہ: جو جادوگر کسی کو اچانک کوئی بات بتاتا ہے مثلا: کسی شخص کے ساتھ کوئی حادسہ ہوتا ہے اور اچانک سے ہی اس کا ملاپ کسی جادوگر پیر سے ہو جاتا ہے وہ اس شخص سے کہتا ہے تمہیں یہ پرابلم ہے وہ شخص بہت حیران پریشان ہوتا ہے اور اس کو اپنا پیر اور پتا نہیں کیا کیا سمج لیتا ہے اصل میں اس کی کیفیت یہ ہے کہ اس جادوگر کے پاس جو جن ہوتا ہے وہ رابتا کرتا ہے اس خناس جن سے جو ہر وقت انسان کے ساتھ رہتا ہے جو خناس انسان کے دل میں وسوسے پیدا کرتا ہے جس کا زکر سورۃ الناس میں ہے عام الفاظ میں کہا جائے تو اس کو ہمذاد بھی کہتے ہیں۔ پھر وہ خناس جن اس کی ہر بات ہر کام بتاتا ہے دوسرے جن کو اور جن بتاتا ہے جادوگر پیر کو۔


تیسرا طریقہ: بعض جنوں کو اللہ نے طاقت دی ہے جو گمان اور اٹکل سے اندازہ لگاتے ہیں مگر جھوٹ کے ساتھ زیادہ۔

چوتھا طریقہ: جو قبل استعمال کیا کرتے تھے جادوگر پیر مگر آج کل بہت کم ہوتا ہے یہ کہ جانوروں کو اُڑا کر کسی کی خبر لینی یا جنات خد کسی جانور کی شکل اخیار کر کے دوسروں کی خبر لے کر جادوگروں تک پہنچانا۔

۱۰  مگر جو کوئی ایک آدھ بات اچک لے بھاگے تو (فوراً ہی) اس کے پیچھے دہکتا ہوا شعلہ لگ جاتا ہے
سورۃ الصافات

Mujh Par Kisi Ne Jadu Kia Hai Ya Allah Ki Azmaish Hai? | Istikhara Online

No comments

 


مجھ پر کسی نے جادو کیا اگر یہ معلوم کرنا ہو تو یہ چند آیات پڑھ کر دم کر لیں انشاءاللہ آپ کو خد پتا چل جائے آپ پر جادو کیا گیا ہے یا پھر ویسے جسمانی کوئی بیماری ہے اگر بیمار رہتے ہیں۔ اگر کوئی کام کرنے کو دل نہیں کرتا اکیلا پن تنہائی پسند چڑچڑا پن محسوس کرتے ہیں کاروبار میں کوئے نہ کوئی رکاوٹ آ جاتی ہے۔

جو لوگ اللہ پر ایمان رکھتے ہیں کسی کو شریک نہیں کرتے نماز قائم کرتے ہیں صبح شام کے اذکار کرتے ہیں اللہ سے ڈرتے ہیں یقین کریں پھر جنات ہو شیطان ہو جادوگر ہو اس انسان کو ڈرا نہیں سکتے ایک بال بھی نہیں اکھاڑ سکتے

یہ ضروری نہیں کے آپ پر جادو ہی کیا گیا ہے پہلے اپنے عمال کو دیکھے اللہ کی طرف سے آزمائش ہو سکتی ہے کیونکہ اللہ نے فرمایا ہے میں تمہیں ضرور آزمائوں گا بس دعا کریں اللہ سے ہماری آزمائش کو ختم کرے اللہ ہمیں معاف کریں اور ہمیں تنہا نہ چھوڑے اللہ کی پناہ مانگتے رہیں کیونکہ اللہ سے بڑھ کر کسی کی کامیاب پناہ گاہ نہیں ہے سب سے اچھی حفاظت اللہ ہی کرنے والا ہے۔

آیات درج ذیل ہیں

سورۃ فاتحہ

١  بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَٰنِ الرَّحِيمِ

٢  الْحَمْدُ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ

٣  الرَّحْمَٰنِ الرَّحِيمِ

٤  مَالِكِ يَوْمِ الدِّينِ

٥  إِيَّاكَ نَعْبُدُ وَإِيَّاكَ نَسْتَعِينُ

٦  اهْدِنَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِيمَ

٧  صِرَاطَ الَّذِينَ أَنْعَمْتَ عَلَيْهِمْ غَيْرِ الْمَغْضُوبِ عَلَيْهِمْ وَلَا الضَّالِّينَ


Jinnat Kia Sach Main Hain? | Jinnat Ka Lafzi Maani Kia Hai? | Kia Jinnat Par Emaan Lana Lazmi Hai?

No comments

 

جنات کا وجود سچ میں ہے یا پھر محض سب جھوٹ ہے؟

جی ہاں جنات حقیقت میں موجود ہیں اسی لئے اللہ نے قرآن میں ایک سورت الجن نازل فرمائی۔


١  قُلْ أُوحِيَ إِلَيَّ أَنَّهُ اسْتَمَعَ نَفَرٌ مِنَ الْجِنِّ فَقَالُوا إِنَّا سَمِعْنَا قُرْآنًا عَجَبًا

۱  (اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم) آپ کہہ دیں کہ مجھے وحی کی گئی ہے کہ جنوں کی ایک جماعت نے (قرآن) سنا اور کہا کہ ہم نے عجیب قرآن سنا ہے

٢  يَهْدِي إِلَى الرُّشْدِ فَآمَنَّا بِهِ ۖ وَلَنْ نُشْرِكَ بِرَبِّنَا أَحَدًا

۲  جو راه راست کے طرف رہنمائی کرتا ہے۔ ہم اس پر ایمان ﻻ چکے (اب) ہم ہرگز کسی کو بھی اپنے رب کا شریک نہ بنائیں گے

٣  وَأَنَّهُ تَعَالَىٰ جَدُّ رَبِّنَا مَا اتَّخَذَ صَاحِبَةً وَلَا وَلَدًا

۳  اور بیشک ہمارے رب کی شان بڑی بلند ہے نہ اس نے کسی کو (اپنی) بیوی بنایا ہے نہ بیٹا

٤  وَأَنَّهُ كَانَ يَقُولُ سَفِيهُنَا عَلَى اللَّهِ شَطَطًا

۴  اور یہ کہ ہم میں ایک بیوقوف اللہ کے بارے میں خلاف حق باتیں کہا کرتا تھا

٥  وَأَنَّا ظَنَنَّا أَنْ لَنْ تَقُولَ الْإِنْسُ وَالْجِنُّ عَلَى اللَّهِ كَذِبًا

۵  اور ہم تو یہی سمجھتے رہے کہ ناممکن ہے کہ انسانوں اور جنات اللہ پر جھوٹی باتیں لگائیں

جن ۱-۵

اللہ تعالٰی نے قرآن میں تقریباَ چالیس بار سے زیادہ جنات کا ذکر کیا ہے۔


© all rights reserved
made with by templateszoo